Pakistan Peoples Party Official

News, updates, events, photographs and other information

احتساب کے قوانین بنانا سندھ حکومت کے اختیار میں شامل ہے: وزیراعلیٰ سندھ

Leave a comment

 

 

*صوبائی اسمبلی نے اپنے اختیار میں رہ کر قانون منظور کیا۔گورنر سندھ کو چاہئے تھا کہ اسمبلی سے بھیجے ہوئے بل پر دستخط کرتے: سید مراد علی شاہ*

کراچی: (10 جولائی 2017): وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا کہ احتساب کے قوانین بنانا سندھ حکومت کے اختیار میں شامل ہے، صوبائی اسمبلی نے اپنے اختیار میں رہ کر قانون منظور کیا۔ پی ایس114 کے ضمنی الیکشن میں حکومتی وسائل استعمال نہیں کئے گئے بلکہ ہم نے کام کرکے خود کو ثابت کیا اور عوام نے ہماری خدمات اور کارکردگی کو دیکھتے ہوئے ووٹ دیئے۔ انہوں نے ضمنی انتخابات میں پیسے چلانے والی خبروں کو بے بنیاد قرار دیا۔ ان خیالات کا اظہار آج انہوں نے میمن میڈیکل اسپتال صفورہ گوٹھ کے دورہ کے دوران کیا۔ اس موقعے پر وزیراعلیٰ سندھ کے ہمراہ صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر سکندر میندھرو اور سیکریٹری صحت فضل اللہ پیچوہو بھی تھے۔
اپنے دورہ میمن میڈیکل اسپتال کے موقع پر وزیراعلی سندھ نے کہا کہ سندھ حکومت نرسنگ اسکول کے قیام کیلئے سالانہ 42 ملین روپئے کی گرانٹ دیتی رہے گی۔ہسپتالوں میں نرسز کے کردار اور اس کی اہمیت کو اجاگر کرنے کے لیے ہر ممکن اقدامات کیے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ میری ہر ممکن کوشش ہے کہ عوام کو صحت کی بہتر سہولیات مہیا کرنے والے افراد کا ہاتھ بٹاسکوں۔انہوں نے کہا کہ سرکاری اسپتالوں کے ساتھ ساتھ نجی اسپتالوں کی مالی معاونت بھی جاری رہے گی۔میرامقصد سندھ کے عوام کو تعلیم اور صحت کی بہتر سہولیات کی فراہمی کو یقنی بنانا ہے۔ دورے کے دوران انہوں اسپتال کے مختلف وارڈز کا معائنہ کرتے ہوئے اسپتال انتظامیہ سے کہا کہ وہ مریضوں کو دی گئی سہولیات سے متعلق وقتاً فوقتاً آگاہی لیتے رہیں۔ وزیراعلیٰ سندھ کو بتایا گیا کہ میمن اسپتال حکومت سندھ، نجی اداروں اور مختلف شخصیات کی مدد سے غریب اور نادار مریضوں کی خدمت کیلئے ہمہ وقت کوشاں ہے۔ بعدازاں وزیراعلیٰ سندھ نے بورڈ آف ڈائریکٹرز کی میٹنگ کی بھی صدارت کی جس میں انہوں نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں صحت کے شعبے میں ترجیحاً پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ ے آگے بڑھنا چاہتا ہوں۔ میں نرسنگ کالیج کے قیام کے لیے آپ کے ساتھ ہوں۔
انہوں میٹنگ کو آگاہی دیتے کہا کہ سندھ حکومت نے پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت کام کی شروعات بدین کے اسپتال سے کی تھی۔ سندھ حکومت نے صحت کے شعبے میں ایمرجنسی نافذ کی ہوئی ہے، میری پوری کوشش ہوگی کہ صحت کے شعبے میں کام کرنے والوں کا ہاتھ بٹاسکوں۔ انہوں بورڈ آف ڈائریکٹرز کے شرکاء کو بتایا کہ میمن اسپتال کے دوستوں نے سڑک تعمیر کرنے کا کہا تو میں نے تین ماہ میں روڈ بناکردے دی، یہی وجہ ہے کہ میں چاہتا ہوں کہ عوام کو صحت کی سہولیات ان کی دہلیز پر مہیا ہوں۔ انہوں نے بتایا کہ سالانہ 42 ملین روپئے گرانٹ کے ساتھ ساتھ آپ کو مزید فنڈز بھی دے رہا ہوں۔ ہم کراچی کی ہر لحاظ سے خدمت کرتے رہیں گے۔میٹنگ میں وزیراعلیٰ سندھ کے لیے اسپتال انتظامیہ کی جانب سے ریمارکس دیئے گئے کہ وزیراعلیٰ سندھ کو اعلیٰ تعلیم، انجنیئرنگ اور معاشیات ان کو ممتاز بناتی ہے۔ اس موقعے پر میمن اسپتال کے فاؤنڈیشن کے چیئرمین پیر محمد دیوان نے بھی وزیراعلیٰ سندھ کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ آپ اپنی زبان اور وعدوں کی پاسداری کرتے ہیں۔
دورے کے اختتام پر وزیراعلیٰ سندھ نے میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ میمن میڈیکل اسپتال کی جانب سے دورے کی دعوت پر وزٹ کیا۔ میمن میڈیکل اسپتال کافی عرصے سے کام کررہاتھا اور علاج معالجے کی سہولیات فراہم کرکے وہ انسانیت کی خدمت کر رہے ہیں، جوکہ اچھا کام ہے۔نرسنگ اسکول کے قیام کیلئے سندھ حکومت ان کی ہر ممکن مدد کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ گڈاپ اور ملیر کے کچھ صحت کے مراکز کو میمن میڈیکل اسپتال سے ملانے کیلئے بھی غور کر رہے ہیں ۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ PS-114 منی پاکستان ہے،2018 کے انتخابات میں بھی کراچی میں بڑی کامیابی حاصل کریں گے۔ضمنی انتخاب جیت کر ثابت کردیاہے کہ کراچی میں پیپلزپارٹی کا اسٹیک ہے ۔لوگ سمجھتے تھے کہ پیپلزپارٹی کراچی میں دلچسپی نہیں لیتی، لیکن ہم نے ترقیاتی کام کرواکر عوام کی خدمت کرکے یہ ثابت کیا تو یہ تاثر غلط ہے۔الیکشن میں پیسے چلانے کی بات من گھڑت اور بے بنیاد ہے ۔سعید غنی ایک مزدور کا بیٹاہے،اگر ووٹ پیسے خریدے جاتے تو سارے امیر انتخابات پیسے کے بنیاد پر جیت جاتے۔ ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے بتایا کہ احتساب کے قوانین بنانا سندھ حکومت کا اختیار میں شامل ہے۔نیب قوانین کی منسوخی کا بل گورنر کے پاس موجود ہے اس پر زیادہ تبصرہ نہیں کروں گا۔قانون بنانا اسمبلیوں کا کام ہے۔نیب کے خلاف عدالتوں کے ریمارکس موجود ہیں،اداروں پر واضع کرتاہوں کہ بیچ ھنٹینگ نہیں چلے گی،اپنی حرکت بند کردیں۔صوبائی اسمبلی نے اپنے اختیار میں رہ کر قانون منظور کیاہے۔ انہوں نے کہا کہ گورنر سندھ کے بیانات پر افسوس ہوا ،انکو چاہیئے تھا کہ بیان دینے کے بجائے اسمبلی کے بھیجے ہوئے بل پر دستخط کرتے۔
عبدالرشید چنا
میڈیا کنسلٹنٹ وزیراعلیٰ سندھ

Advertisements

Author: PPP Social Media Cell /FAA

Official Social Media Cell of Pakistan Peoples Party

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s