Pakistan Peoples Party Official

News, updates, events, photographs and other information


Leave a comment

چین کی 130 ملین ڈالرز کی نئی سرمایہ کاری، گھاروں کے قریب 50 میگاواٹ کا ونڈ پاور پروجیکٹ قائم کیا جائے، قائم علی شاہ

2014 Sept 29 Pak China MOU Wind Power Project Gharo

صوبہ سندھ میں گھارو کے قریب 130ملین ڈالرز کی چین کی جانب سے نئی سرمایہ کاری سے 50میگاواٹ کا ونڈ پاور پروجیکٹ قائم کیا جائیگا۔ اس منصوبے پر دونجی کمپنیاں ھائیڈرو چائنا اور داؤد پاور (پرائیویٹ) لمیٹیڈ کمپنیاں جوائنٹ وینچر کے تحت کام کریں گی اور اس منصوبہ کیلئے فنانسگ چائینز سرکاری بینک فراہم کریگا جبکہ سندھ حکومت 50میگاواٹ پاور پروجیکٹ کیلئے متبادل انرجی ڈولپمینٹ بورڈ(اے ای ڈی بی) سے ایل او آئی، انیشل انوائرمینٹ ایگزامینشن(آئی ای ای) سے این او سی اور ایس ای پی اے سے رپورٹ، نیپرا سے جنریشن لائسنس اور اپ فرنٹ ٹیرف اور این ٹی ڈی سی سے انرجی کی خریداری کا معاہدہ کرے گی تو کمپنی کو1720ایکڑ زمین فراہم کی جائے گی۔ اس منصوبہ کی مالی کلاز اس سال کے آخر تک متوقع ہے اور جنوری 2015سے تعمیر شروع ہوگی۔ تعمیر کا مجموعی عرصہ 18ماہ ہوگا اور تجارتی آپریشن جون 2016تک شروع ہوگا اور یہ منصوبہ پاک چائنا اکنامک کوریڈور کے ترجیحی منصوبوں میں شامل ہے اور اس منصوبے سے مقامی لوگوں کیلئے سینکڑؤں روزگار کے مواقعے پیدا ہونگے۔ وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ اے ای ڈی بی اور ہائیڈرو داؤدچائنا ونڈ فورم (50میگاواٹ) کے مابین سب لیز پر دستخط کی تقریب جوکہ وزیراعلیٰ ہاؤس میں منعقد ہوئی میں موجود تھے۔ چین کے قونصل جنرل، اے ای ڈی بی اور محکمہ انرجی کے دیگر افسران نے بھی تقریب میں شرکت کی۔دستخط کی تقریب کے بعد چین کے قونصل جنرل سے باتیں کرتے ہوئے وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ صوبہ سندھ ونڈ انرجی کے حوالے سے قدرتی وسائل سے مالا مال ہے اور اب تک جھمپیر،گھارو ونڈ کوریڈور میں 50ہزار میگاواٹ ونڈ انرجی پیدا کرنے کے حوالے سے ونڈ انرجی کے شعبہ میں نشاندہی کی جا چکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت کے پاس انرجی کی پیداواری ضروریات کو سستے نرخوں خاص طور پر ونڈ انرجی اور کوئلے کے ذریعے بجلی کی پیداواری کے حوالے سے جامع انرجی پالیسی ہے۔ وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ صوبے میں ان دونوں وسائل کی ترقی کیلئے چینی سرمایہ کاری اور بھرپور تعاون کی ضرورت ہے تاکہ ان وسائل کو بڑے پیمانے پر ترقی دی جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ پاک چین دوستی کا ماضی شاندار رہا ہے اور مستقبل میں بھی پاک – چین دوستی جاری رہے گی جوکہ اس خطے کے مجموعی استحکام کیلئے ضروری ہے۔ صوبائی انرجی ڈولپمینٹ کے حوالے سے افسران کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت صوبہ میں 40سے زائد کمپنیاں 3000میگاواٹ بجلی ونڈ انرجی کوریڈور کے ذریعے پیدا کرنے کیلئے مصروف عمل ہیں۔


Leave a comment

اسپیکر قومی اسمبلی مجوزہ پارلیمانی کمیٹیوں کی تشکیل کے حوالے سے کارروائی جاری رکھیں،سینیٹررضاربانی

اکستان پیپلزپارٹی کے رہنماسینیٹر میاںرضاربانی نے اسپیکر قومی اسمبلی پر زوردیا ہے کہ وہ پارلیمنٹ اور پارلیمانی جمہوریت کے مفاد میں ان کی جانب سے تین پارلیمانی کمیٹیوں کی تشکیل کے لئے مستعدی سے کارروائی جاری رکھیں۔اسپیکر قومی اسمبلی ایازصادق کے نام لکھے گئےایک خط میں سینیٹررضاربانی نے ان کی توجہ 17ستمبر2014ء کو پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس کے موقع پر ایوان میں دی گئی اس تجویز کی جانب دلائی ہے کہ تین پارلیمانی کمیٹیاںجن کے نام پارلیمانی کمیٹی برائے قانونی مسودات،پارلیمانی کمیٹی برائے قواعد دستورالعمل اورمراعات اور پارلیمانی کمیٹی برائے قومی سلامتی ہو،تشکیل دی جا ئیں تاکہ پارلیمنٹ کی کارکردگی اور قومی سلامتی اور خارجہ امورسے متعلق معاملات پر پارلیمنٹ کے بڑھتے ہوئے فروگزاشت کے حوالے سے سہولت مہیا ہوسکے۔ رضا ربانی نےخط میں مزید کہا ہے کہ اس تجویز دیئے جانے کے دوسرے ہی دن میں نے اسی حوالے سے ایک ورکنگ پیپر(دستاویز)ارسال کیا ۔یہ دستاویزدیگرافرادکے ساتھ ساتھ چیئرمین سینٹ آف پاکستان وزیر خزانہ وریونیومحمد اسحاق ڈار،وزیرسائنس وٹیکنالوجی اور بذات خود آپ(اسپیکر قومی اسمبلی) کی خدمت میں ارسال کی گئی۔خط میں کہا گیا ہے کہ پارلیمنٹ کے اس مشترکہ اجلاس کو 19ستمبر 2014ء کو اس بارے میں بغیر کسی پیشرفت کے ملتوی کردیا گیا۔سینیٹررضا ربانی نے اسپیکر قومی اسمبلی کو مخاطب کرتے ہوئے ان پر زوردیا ہے کہ وہ پارلیمنٹ اور پارلیمانی جمہوریت کے مفاد میں ان کی جانب سے تین پارلیمانی کمیٹیوں کی تشکیل کے لئے مستعدی سے کارروائی جاری رکھیں۔
Source : Daily Jang


Leave a comment

Sindh govt ready to hold LB polls but wants uniformity: CM Sindh

qaim-ali-shah001

KARACHI: Sindh government is ready to hold local bodies (LB) elections, but it wanted its uniformity.
Chief Minister Qaim Ali Shah said now it was the responsibility of federal government to announce election within reasonable notice.
Responding to a question from a member of 101 national management course participants on visit of Karachi getting briefing from the Sindh government he informed Sindh was the first province which passed the law of local government (LG).
He said Sindh had assured the apex court for holding LG election and even had completed the delimitations for this purpose but someone had challenged our delimitations in the court, which were still pending.
He said we wanted the uniform system of LG and federal government was competent to do the needful and we were looking for that.
Performance of Sindh government after National Finance Commission (NFC) Award he said NFC Award was passed in 2010 but unfortunately we compelled to face natural calamities in 2010 and 2011 and major share of our development fund were diverted toward rescue and relief activities.
He said during flood in 2010 we attended 7 million affectees, while in unprecedented heavy rainfall in 2010 we provided rescue and relief to 9 million people.
He said after that we were heavily engaged to meet with drought challenges in Tharparkar area last year and still yet we were providing wheat to the drought affectees free of cost and only this year we have distributed wheat at the worth of Rs 1.2 billion.
He said inspite of these natural calamities, the Sindh government had performed well even last financial year we have completed 627 development schemes and utilised maximum development funds.
Earlier he said poverty was the main problem of Sindh and government was now conceiving job oriented planning and policies not only to minimise the unemployment but to increase the purchasing power of the people to activate the business and investment activities in the province.
He said to provide jobs to unemployed youth was the policy of Pakistan Peoples Party, as such we provided 300,000 direct jobs during our last tenure.
He said in addition Sindh government has provided job skill training to 1,80,000 youths in 70 different trades enabling them either to earn through own business or to get job in public/private sector.
He said keeping in view the energy shortage and having been in tail end, the Sindh government was giving priority to energy and water sector. He said health and education were also at our top priorities.
Additional Chief Secretary Development Muhammad Wasim briefed the delegation about the development activities specially in the urban transport, energy, agriculture, irrigation sectors.
He briefed the delegation about rehabilitation of Sukkur and Guddu Barrage, remodeling and lining of irrigation canals, rehabilitation of fresh water bodies/reservoirs such as Manchar Lake and Keenjar Lake.
Inspector General of Sindh Police briefing the delegation about targeted operation informed since the targeted operation was launched, Sindh Police has challaned more than 17,000 criminals out of which only 5 percent have been decided.
He said now Sindh government has increased the number of anti terrorist courts and investigation officers to expedite the prosecution process.

Source : Daily Times


Leave a comment

حکومت صوبے میں بلدیاتی انتخابات کرانے کے لیے تیار ہے، وزیراعلیٰ سندھ

کراچی: وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ کا کہنا ہے کہ سندھ حکومت مناسب نوٹس پر بلدیاتی انتخابات کے لیے تیار ہے۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے کہا کہ صوبے میں بلدیاتی انتخابات کے لیے حلقہ بندیوں کا کام مکمل کرلیا ہے اور سندھ حکومت مناسب نوٹس پر انتخابات کے لیے تیار ہیں تاہم ملک بھر میں ایک ہی جیسا بلدیاتی نظام چاہتے ہیں جس کے لیے وفاقی حکومت کی ذمہ داری ہے کہ وہ قدم بڑھائے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ بلدیاتی نظام کو عدالت میں چیلنج کیا گیا جو آج تک زیر التوا ہے۔

Source : Daily Express


Leave a comment

عمران خان پیپلز پارٹی کی قیادت پر تنقید کرتے وقت مناسب الفاظ استعمال کریں، قمرزمان کائرہ

کراچی: پاکستان پیپلز پارٹی کے سیکریٹری اطلاعات قمر زمان کائرہ نے کہا ہے کہ عمران خان پیپلز پارٹی قیادت اور کارکنوں  پر تنقید ضرور کریں لیکن الفاظ کا مناسب چناؤ کریں۔

کراچی ایئرپورٹ پر میڈیا سے بات کرتے ہوئے قمر زمان کائرہ کا کہنا تھا کہ کوئی بھی ملک ہمیشہ جمہوریت میں ہی ترقی کرتا ہے اس لئے ہمارے ہاں بھی جمہوریت کو چلتے رہنا چاہئے،  پاکستان میں جب بھی آمریت آئی تو کبھی ملک ٹوٹ کر فرقہ واریت کا شکار ہوا، کبھی صوبوں  میں  تفریق بڑھی، کبھی اسلحہ اور منشیات عام ہوئی اور کبھی ملکی ترقی زوال پزیر ہوئی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں جمہوریت کا دور بدقسمتی سے صرف ساڑھے 10 سالوں  پر محیط ہے، اتنی کم مدت میں جمہوریت کے ثمرات عوام تک منتقل نہیں ہوسکتے تھے، جمہوریت کو چلتے رہنے دیں تو نظام کی خرابیاں دور ہوجائیں  گی اور حقیقی جمہوریت بھی آجائے گی۔

قمر زمان کائرہ نے کہا کہ طاہرالقادری اور عمران خان کو ہم سے بہت سے اختلافات ہوں گے اختلاف رائے جمہوریت کا حسن ہے، وہ عمران خان سے گزارش کرتے ہیں کہ پیپلز پارٹی قیادت اور کارکنوں  پر تنقید ضرور کریں لیکن الفاظ کا مناسب چناؤ کریں، تنقید کرتے ہوئے عمران خان کے الفاظ صحیح نہیں ہوتے، طاہرالقادری کے مطالبات کسی حد تک درست ہیں، ان کے مطالبات پر ہم ان کے ساتھ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان اپنی تقاریر میں برطانیہ اور امریکا کی مثالیں  دیتے ہیں لیکن درحقیقت دونوں ہی ممالک میں دو جماعتوں نے باریاں لگائی ہوئی ہیں، پوری پارلیمنٹ نے جمہوریت کے تحفظ کے لئے بہت اہم کردار ادا کیا لیکن عمران خان کی اتحادی پارٹی جماعت اسلامی بھی ان کے ساتھ نہیں ۔

پیپلز پارٹی کے رہنما کا کہنا تھا کہ ملک میں جمہوریت نہ ہوتو وفاق کمزور ہوتا ہے اور آمریت کو موقع ملتا ہے۔ عمران خان نے لندن میں ہونے والے میثاق جمہوریت پر انگلیاں  اٹھائیں لیکن وہ غور کریں تو انہیں پتا چلے گا کہ میثاق جمہوریت آمریت کے خاتمے اور مستحکم جمہوریت کے لئے تھا۔ بے نظیر بھٹو نے نواز شریف کے ساتھیوں کی طرف سے زیادتیوں اور تکلفیں اٹھانے کے باوجود پرویز مشرف کی آمریت کے خاتمے کے لئے جمہوریت کا ساتھ دیا۔ برطانیہ میں  ہونے والا چارٹر آف ڈیموکریسی پوری دنیا کے سامنے ہوا تھا  جبکہ منصوبے تو سب سے چھپ کر بنائے جاتے ہیں، تمام سیاسی جماعتوں  نے میثاق جمہوریت پر دستخط کئے تھے۔

Source : Daily Express


Leave a comment

Sindh gets $130m Chinese investment for Gharo wind power project

KARACHI – The Sindh government has gained another Chinese investment of $130 million for establishment of 50MW wind power project near Gharo city. This project is executed by two private companies which include Hydro China and Dawood Power (Private) limited under their joint venture.
The financing of this project would be by the Chinese state owned bank, whereas the Sindh government has allotted 1720 acres of land to the company after it obtained LoI for 50MW wind power project from Alternate Energy Development Board (AEDB), NoC on Initial Environment Examination (IEE) report from SEPA, generation license and, upfront tariff from NEPRA and Energy Purchase Agreement (EPA) with NTDC.
The financial close of this project is expected by the end of this year and the construction will start from January 2015. The total construction period would be 18 months and commercial operation of this project would be before June 30, 2016.
Chief Minister Sindh Syed Qaim Ali Shah witnessed sub lease (land) signing between AEBD and Hydro Dawood China Wind Farm (50 Mw) at CM House Karachi.
The Consul General of China, officers of AEBD and Energy Department also attended the ceremony. Talking to the Consul General of China and other participants of ceremony, Shah said that Sindh has great potential in the field of wind energy and added that up to now potential of 50,000MW of wind energy has been identified in the Jhampir Gharo wind corridor.
He said that Sindh government has developed a comprehensive energy policy to meet it growing energy needs through cheap and indigenous resources specially wind and coal resources which are largely available in the province.
He said that support and active participation of Chinese investment to explore both these resources in the province was highly appreciable. He said that Pakistan China friendship has a glorious past as well as bright future and would continue to act as stabilizing force for the entire region.
The chief minister Sindh further informed the Chinese delegation that PPP Chairman and Co-Chairman were keen to further strengthen the relations with the communist party of China as such they have visited many times to China and signed many MoUs with Chinese investors for the development projects in different sectors.
The side line discussion with the officers of the provincial energy development reveals that up to now more than 40 companies are actively engaged in the province to develop 3000 Mw power only from the wind corridor. They were of the view that another project of 50 Mw being executed by China three Gorges Company is ready to supply 50 Mw power to the National Grid within next two months.

Source : The Nation


Leave a comment

Sindh gains Chinese $130m for setting up 50MW power project

KARACHI: Sindh province has gained another Chinese investment of $130 million for setting up of 50 megawatts (MW) Wind Power Project near Gharo City.
This project is executed by two private companies including Hydro China and Dawood Power (Private) Limited under joint venture.
The financing of this project would be by the Chinese state owned bank, whereas the Sindh government has allotted 1,720 acres of land to the Company after it obtained letter of intent for 50 MW Wind Power Project from Alternate Energy Development Board (AEDB), no objection certificate on Initial Environment Examination (IEE) report from Sindh Environmental Protection Agency, generation license and upfront tariff from National Electric Power Regulatory Authority and Energy Purchase Agreement with National Transmission Dispatch Company.
The financial close of this project is expected by the end of this year and the construction will start from January 2015.
The total construction period would be 18 months and commercial operation of this project would be before June 30, 2016. This project was included as one of top priority project for Pak China Economic Corridor and to generate hundreds of jobs for local people.
Chief Minister Sindh Qaim Ali Shah witnessed sub lease (land) signing between AEBD and Hydro Dawood China Wind Farm (50 Mw).
The Consul General of China, officers of AEBD and Energy Department also attended the ceremony.
Qaim talking to Consul General China and other participants said Sindh province has great potential in the field of wind energy and up till now potential of 50,000 MW of wind energy has been identified in the Jhampir Gharo wind corridor.
Sindh government has developed a comprehensive energy policy to meet it growing energy needs through cheap and indigenous resources specially wind and coal resources which are largely available in the province.
Sideline discussion with the officers of the provincial energy development revealed till date more than 40 companies were actively engaged in the province to develop 3,000 MW power only from the wind corridor. They were of the view another project of 50 MW being executed by China three Gorges Company was ready to supply 50 MW power to the national grid within next two months.

Source : Daily Times

Follow

Get every new post delivered to your Inbox.

Join 26,037 other followers